سہارا ۔ایک دلیل ،ایک یقین

سہارا….ایک یقین!   سب لوگ دوپہر کے کھانے پر بیٹھے تھے۔عجب مصنوعی قسم کی گفتگو ہورہی تھی۔کبھی صدر کو زکام ہوجانے کا ذکر چھڑ جاتا اور کبھی کسی غیر ملکی سفیر کے ساتھ جو ”دوستانہ“گفتگو ہو چکی ہوتی،اسے تفصیل سے بیان کیا جا تا۔انداز کلام ایسا ہو تا گویا صاف صاف کہا جا رہا ہو…

اشتہارات کی دنیا

اشتہارات  کے معاشرے پر اثرات                   یا  اشتہارات میں معاشرہ  کی جھلک!   “بھائی  نیا ٹوتھ پیسٹ لایا ہے ! جس کا اشتہار ٹی وی پر آرہا ہے !’   یہ اس خط کا  ایک حصہ ہے جو ہم نے 1985 ء میں اپنے ابا جان کو لکھا تھا ۔ وہ ان دنوں نائیجیریا میں مقیم…

پالیسیاں۔۔۔ دغابازیاں

آ زادی کے مہینے میں وارد ہونے والے ’’ بجلی کے بل ‘‘ نے آتے ہی ہمیں آزادی کے اس سراب سے باہر نکال دیا ۔اُف خدایا۔۔۔ اتنا بل؟ پچھلے ماہ کا دوگناہ۔۔۔ بل ہاتھ میں لیتے ہی مجازی خدا کے غصہ کا پارہ ساتویں آسمان کو چُھو گیا۔۔۔ سارا نزلہ گھوم پھر کر ہم…

اردو سوشل میڈیا سمٹ 2015، آخری حصّہ

کھانے سے فارغ ہوکر آڈیٹوریم میں اپنی نشست پر واپس آئے۔تھوڑی دیر بعد پروگرام کا دوبارہ آ غاز ہوا۔KPFکے نائب صدر خورشید تنویر صاحب کی تقریرتھی۔انہوں نے زبان کے ضمن میں پڑھے لکھے افراد کے زیادہ ذمہ دارہونے کی ضرورت پر زوردیا۔ اس کے بعد کالم نگار، بز نس ا یڈوائزر۔۔۔ جناب کاشف حفیظ کی…

بدبودار سسٹم

بندہ تقریباً قریباً عرصہ ایک سال سے سانس کے عارضہ میں مبتلا ہے۔۔۔(احباب سے دعاؤں کی درخواست ہے)۔ چند دن پہلے بخار اور سانس کی تکلیف سے نیم جاں کنی کی حالت میں بھائی کی دوکان پر لیٹا تھا۔۔۔۔۔ ایک آدمی آیا ۔۔۔ سلام اور حال و احوال کے بعد کہا: میں ’’ایکٹو‘‘ (تصدیق شدہ)…

سوشل میڈیا سمٹ: حصہ دوم

پروگرام کے آغاز میں شبہ ابلاغ کے صدر جناب محمود غزنوی افتتاحی کلمات کے لیے اسٹیج پر تشریف لائے۔ ان کو دیکھتے ہی ہمارے کانوں میں راہنما، راہنما، بت شکن غزنوی، غزنوی کے نعرے گونجنے لگے۔۔۔ جی نہیں! ایسی کوئی آوازیں آڈیٹوریم میں نہیں تھیں بلکہ یہ تو آ ج سے برسوں پہلے کے انتخابی…

خون کے دھبے دھلیں گے کتنی برساتوں کے بعد

کراچی ایک بار پھر لہو لہان ہے۔ زخم خوردہ کراچی جس کا پرانا زخم مندمل ہی نہیں ہو پاتا کہ پھر ایک نیا زخم لگا دیا جا تا ہے۔ کراچی جو کبھی روشنیوں کا شہر تھا۔ اب دہشت گردی، بھتہ خوری اور ٹارگٹ کلنگ کا شہر ہے۔ کبھی جس کی راتیں جاگا کرتی اور شہری…

دعا۔۔۔

ہر واقعے، یا حادثے میں مختلف افراد پر پڑنے والے اثرات بھی جدا ہوتے ہیں اور ردّ عمل بھی الگ کرتے ہیں! کچھ کی بھوک اڑ جاتی ہے کچھ کی بھوک ٹینشن میں بڑھ جاتی ہے، کسی کی نیند اڑجاتی ہے تو کسی پر سکینت طاری ہوجاتی ہے! کوئی قنوطیت کا شکار ہوجاتا ہے تو…

ہم آشفتہ سروں نے۔۔۔

16دسمبر پاکستان کی ملی تاریخ کاایک انتہائی افسوسناک دن۔۔۔ جب ہمارا ایک بازو ہم سے جدا ہو گیا۔بہت کچھ اس موضوع پر لکھا جا چکا ہے اور بہت کچھ ابھی لکھا جا سکتا ہے کیانکہ کسی ایک فرد کی داستان نہیں ہے اور نہ کسی ایک گروہ کی بلکہ یہ تو ہماری اجتماعی بے حسی…

بابا میری آواز سنو نا،سنو نا!

z- بابا میری آواز سنو نا، سنونا بابا میرے یہ الفاظ سنونا، سنو نا ! کہاں گئے ہواب آبھی جائو! بیٹھا کے کندھے پہ پھرگھمائو ! بابا میری آواز سنونا! کھلونے لاکر دیے تھے جو بھی، میں اب نہیں ان سے کھیلتا ہوں کہ آپ کے بعد اپنے گھر میں، کہا یہ ماں نے کہ…